چینی وزیرخارجہ کا گروپ 20 اجلاس میں افغانستان پر عائد معاشی پابندیاں اٹھانے کا مطالبہ

بیجنگ:چین کے ریاستی کونسلر اور وزیر خارجہ وانگ یی نے افغانستان پر عائد یکطرفہ پابندیاں اور بندشیں اٹھانے کا مطالبہ کیا ہے۔
افغان مسئلے پر گروپ 20 (جی 20) ممالک کے وزرائے خارجہ کی جمعرات کو ہونے والی ویڈیو کانفرنس میں اظہار خیال کرتے ہوئے وانگ نے کہا کہ افغانستان کے زرمبادلہ کے ذخائر اس کا قومی اثاثہ ہیں جو افغان عوام کی ملکیت ہیں جن کا استعمال انہیں ہی کرنا چاہئے اور یہ کہ زرمبادلہ کے ذخائر کوسودے بازی کے لئے افغانستان پر بطور سیاسی دباو ڈالنے کےلیے استعمال نہیں کرنا چاہئے۔

چینی وزیر خارجہ نے اجلاس میں افغان مسئلے کے حوالے سے تجاویز پیش کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان کے لیے امداد کے حجم اور رفتار کو بڑھانا ضروری ہے ، خاص طور پر افغان عوام کی انتہائی ضرورت کی امداد بروقت فراہم کی جائے۔

وانگ نے کہا کہ چین نے افغانستان کو 20کروڑ یوآن(3کروڑ8لاکھ 90ہزارامریکی ڈالر)مالیت کا امدادی سامان فراہم کرنے کا فیصلہ کیا، جس میں کوویڈ-19 ویکسین کی 30 لاکھ خوراکوں کی پہلی کھیپ کا عطیہ شامل ہے، انہوں نے امید ظاہر کی کہ افغانستان کی موجودہ صورتحال کے ذمہ دار ممالک اس پر سنجیدگی سے غور اور افغان عوام کو درپیش مشکلات کو جلد از جلد دور کرنے کے لیے مزید اقدامات اٹھاتے ہوئے اپنی ذمہ داریاں پوری کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں